لانگ مارچ سے قبل ن لیگ نے پی ٹی آئی رہنماؤں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر دیا، ڈی چوک سیل کر دیا۔

لانگ مارچ سے قبل ن لیگ نے پی ٹی آئی رہنماؤں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر دیا، ڈی چوک سیل کر دیا۔

لانگ مارچ سے قبل ن لیگ نے پی ٹی آئی رہنماؤں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر دیا، ڈی چوک سیل کر دیا۔

لانگ مارچ سے قبل ن لیگ کا پی ٹی آئی رہنماؤں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع، ڈی چوک سیل

اسلام آباد – مسلم لیگ ن کی زیر قیادت حکومت نے معزول وزیراعظم عمران خان کی پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سے وابستہ سیاسی رہنماؤں اور کارکنوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر دیا ہے۔

مقامی میڈیا رپورٹس کے مطابق پولیس نے اب تک پی ٹی آئی کے کم از کم 63 رہنماؤں اور کارکنوں کو گرفتار کیا ہے۔

اس کے علاوہ پولیس نے پیر کو پی ٹی آئی رہنماؤں حماد اظہر، جمشید اقبال چیمہ، علی نوید بھٹی، ملک ندیم عباس بھارہ، یاسر گیلانی، میاں اسلم اقبال، سعدیہ سہیل، اعجاز چوہدری، میاں اکرم عثمان، عقیل صدیقی، عامر ریاض قریشی کے گھروں پر چھاپے مارے۔ شیخ محمد حیدر، سردار ارشد طفیل اور سعید احمد خان کو گرفتار کرنے میں ناکام رہے۔

اطلاعات ہیں کہ پنجاب پولیس نے پی ٹی آئی کے 350 اہم رہنماؤں کی فہرست تیار کر لی ہے اور اس کی کاپیاں مختلف تھانوں کو بھجوا دی ہیں جن کو جلد از جلد گرفتار کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

ان گرفتاریوں کا مقصد پی ٹی آئی کے اسلام آباد پر لانگ مارچ کو متاثر کرنا ہے جو 25 مئی سے شروع ہو رہا ہے جیسا کہ پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان نے ہفتے کے آخر میں اعلان کیا تھا۔

دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے وفاقی دارالحکومت میں چند اہم اقدامات اٹھاتے ہوئے رینجرز، ایف سی اور پنجاب پولیس کی اضافی نفری طلب کر لی ہے اور مشہور ڈی چوک کو کنٹینرز لگا کر سیل کر دیا ہے۔

کچھ اطلاعات کے مطابق، حکومت اسلام آباد کے مضافات میں پی ٹی آئی کے لانگ مارچ کو سری نگر ہائی وے تک روکنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

مزید پڑھنے کے لیے یہاں پر کلک کریں

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں