سپریم کورٹ نے احتساب کے عمل میں مداخلت کا ازخود نوٹس لے لیا

سپریم کورٹ نے احتساب کے عمل میں مداخلت کا ازخود نوٹس لے لیا

سپریم کورٹ نے احتساب کے عمل میں مداخلت کا ازخود نوٹس لے لیا

اسلام آباد – چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے ‘احتساب کے عمل میں مبینہ مداخلت’ کا ازخود نوٹس لے لیا۔

اپنے دوسرے از خود نوٹس میں ملک کے اعلیٰ ترین جج نے پانچ ارکان پر مشتمل ایک بڑا بنچ تشکیل دیا ہے جو جمعرات کو اس معاملے کی سماعت کرے گا۔ یہ کارروائی سپریم کورٹ کے جج کی سفارش پر کی گئی ہے۔

سپریم کورٹ کی طرف سے جاری کردہ ایک پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ اس طرح کی سمجھی جانے والی مداخلت مقدمات کی کارروائی، چھیڑ چھاڑ، عدالتوں میں ثبوت غائب کرنے یا پراسیکیوٹنگ ایجنسیوں کے قبضے اور تبادلے اور اہم عہدوں پر افسران کی تعیناتی کو متاثر کر سکتی ہے۔

اس میں مزید کہا گیا کہ احتساب کے قوانین میں ترمیم کے لیے میڈیا رپورٹس کے ساتھ اس طرح کے اقدامات سے فوجداری نظام انصاف کے کام کو نقصان پہنچنے کا خدشہ ہے اور یہ بنیادی حقوق کی خلاف ورزی کے مترادف ہے جو مجموعی طور پر معاشرے کو متاثر کرتے ہیں اور حکمرانی پر لوگوں کے اعتماد کو ختم کرتے ہیں۔ ملک میں قانون اور آئین پرستی

یہ اقدام نئی حکومت میں غیر قانونی تبادلوں اور عہدے داروں کی تعیناتی کی اطلاعات کے درمیان سامنے آیا ہے۔

سپریم کورٹ نے قومی احتساب بیورو (نیب) قانون میں ترمیم کے وفاقی کابینہ کے فیصلے کا بھی نوٹس لیا۔

مزید پڑھنے کے لیے یہاں پر کلک کریں

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں