پاکستانی عدالت نے سری لنکن شہری کو لنچنگ کیس میں 6 مجرموں کو سزائے موت سنادی

پاکستانی عدالت نے سری لنکن شہری کو لنچنگ کیس میں 6 مجرموں کو سزائے موت سنادی

پاکستانی عدالت نے سری لنکن شہری کو لنچنگ کیس میں 6 مجرموں کو سزائے موت سنادی

اسلام آباد – انسداد دہشت گردی کی ایک عدالت نے پیر کو سری لنکا کے شہری پریانتھا کمارا پریانتھا دیاوادانگے کے لنچنگ کیس میں چھ افراد کو موت کی سزا سنائی، جسے گزشتہ سال دسمبر میں ایک مہلک ہجوم نے مار پیٹ کر جلا دیا تھا۔

مقامی میڈیا کی رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ عدالت نے سات دیگر افراد کو عمر قید کی سزا سنائی ہے۔ اس مقدمے میں نامزد کم از کم 76 دیگر کو دو دو سال قید کی سزا سنائی گئی، جب کہ ایک کو بری کر دیا گیا۔

عدالت نے گزشتہ ماہ 89 افراد پر فرد جرم عائد کی جبکہ 9 کم عمر ملزمان کا چالان الگ سے جمع کرایا گیا۔

اس سے قبل استغاثہ اور دفاع دونوں اپنے اپنے دلائل مکمل کر چکے ہیں جو روزانہ کی بنیاد پر سنے جاتے تھے جبکہ تفتیش کاروں اور عینی شاہدین کے بیانات بھی قلمبند کیے جا چکے ہیں۔

لاہور کی کوٹ لکھپت جیل میں مقدمے کی سماعت جج نتاشا نسیم نے کی۔ معلوم ہوا ہے کہ استغاثہ نے 50 کے قریب عینی شاہدین کو عدالت میں پیش کیا جبکہ 55 ملزمان کے موبائل فونز کی سی سی ٹی وی فوٹیج اور کلپس بطور ثبوت پیش کی گئیں۔ چالان میں ڈی این اے رپورٹس اور فرانزک شواہد بھی شامل کیے گئے ہیں۔

یہ ہولناک واقعہ گزشتہ سال پیش آیا جب کمارا کو مبینہ طور پر توہین مذہب کے شبہ میں ایک ہجوم نے پیٹ پیٹ کر مار ڈالا۔ پاکستان پینل کوڈ کی دفعہ 302، 297، 201، 427، 431، 157، 149 اور انسداد دہشت گردی ایکٹ کی 7 اور 11 ڈبلیو ڈبلیو کے تحت 900 افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا۔

اس ہولناک واقعے پر تمام حلقوں سے شدید مذمت اور غم و غصہ پایا گیا، جبکہ بہت سے کارکنوں نے مجرموں کے خلاف فوری کارروائی کا مطالبہ کیا۔

مزید پڑھنے کے لیے یہاں پر کلک کریں

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں