خیبرپختونخوا میں بارش اور برف باری سے 18 افراد جاں بحق

خیبرپختونخوا میں بارش اور برف باری سے 18 افراد جاں بحق

پشاور: خیبرپختونخوا میں بارش سے متعلقہ واقعات میں 18 افراد ہلاک ہو گئے۔ دی نیوز نے منگل کو رپورٹ کیا۔ صوبے میں بارش اور برف باری کے دوران 3 سے 10 جنوری تک چھت۔ اور دیوار گرنے اور لینڈ سلائیڈنگ سے زخمی ہونے والوں کی تعداد 46 تک پہنچ گئی۔

پراونشل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (PDMA) کے مطابق صوبے کے مختلف اضلاع میں 109 سے زائد مکانات کو نقصان پہنچا۔

چارسدہ، کرک، خیبر، مہمند، نوشہرہ اور اپر دیر میں متاثرین میں امدادی۔ اشیاء تقسیم کی گئیں جبکہ متاثرہ علاقوں میں امدادی اور بحالی کی سرگرمیاں بھی جاری ہیں۔

پیر کو صوبے کے بیشتر علاقوں میں موسم سرد اور خشک رہا۔ محکمہ موسمیات نے منگل کے روز موسم سرد اور خشک رہنے کی پیش گوئی کی ہے۔

ایبٹ آباد
گلیات میں شدید برف باری کے بعد شروع کیا گیا۔ ریسکیو آپریشن اب بھی جاری ہے۔ کیونکہ زیادہ تر سیاحوں کو ان کی گاڑیوں سمیت نتھیاگلی، ڈونگاگلی، ایوبیہ، چنگلاگلی اور ۔ دیگر برفباری والے علاقوں سے نکالا گیا ہے۔

0

متعدد مقامات پر لینڈ سلائیڈنگ کے باعث بند ہونے والی مرکزی مری روڈ کو دوبارہ۔ ٹریفک کے لیے کھول دیا گیا۔ ایبٹ آباد خصوصاً بالائی علاقوں میں خراب موسم نے نظام زندگی کو مفلوج کر کے رکھ دیا۔ جب درجہ حرارت نقطہ انجماد سے نیچے گر گیا۔

گزشتہ چھ دنوں میں موسم کی شدید برف باری کی وجہ سے۔ نتھیاگلی-بالاکوٹ روڈ سمیت متعدد رابطہ سڑکیں بند ہو گئی تھیں۔

برفباری سے روزمرہ کی زندگی متاثر ہوئی کیونکہ زیادہ تر لوگ گھروں کے اندر ہی رہے۔

مقامی لوگوں نے شکایت کی کہ موسم سرد ہونے کے بعد ضلع بھر میں لکڑی اور ایندھن کی قیمتیں بڑھ گئیں۔ لکڑی کی قیمتوں میں اضافے کے باوجود کچھ علاقوں میں ایندھن غائب ہو گیا ہے۔

گلیات میں لکڑی، پیٹرول، ادویات، خوراک اور دیگر اشیائے ضروریہ کی قلت نے لوگوں کا جینا محال کر دیا ہے۔

سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ٹریفک) قمر حیات نے بتایا کہ ایبٹ آباد نتھیاگلی روڈ کو کلیئر کر دیا گیا ہے جبکہ ریسکیو کا کام جاری ہے۔

انہوں نے کہا کہ ٹریفک وارڈنز ضلعی پولیس، جی ڈی اے کے عملے اور ریسکیو 1122 کے اہلکاروں کی جانب سے کیے جانے والے ریسکیو آپریشن میں مدد کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سیاحوں کو چائے فراہم کرنے کے لیے موبائل کینٹین کو چالو کر دیا گیا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ برف میں پھنسے لوگوں کی مدد کے لیے ورکشاپ موبائل بھی تعینات کیا گیا تھا۔

1

مانسہرہ
کاغان ڈویلپمنٹ اتھارٹی نے سیاحتی مقام شوگران جانے والی لنک روڈ پر نمک چھڑک دیا۔

کے ڈی اے کے انسپکٹر محمد معظم نے صحافیوں کو بتایا کہ “ہم نے وادی کاغان میں مختلف سڑکوں پر برف باری کی وجہ سے پھسلن کو ختم کرنے کے لیے نمک چھڑکنا شروع کر دیا ہے۔”

معظم نے کہا کہ اگرچہ سیاحوں کے داخلے پر پابندی ہے، تاہم مزید برف باری وادی میں پڑ سکتی ہے اور اس سے لینڈ سلائیڈنگ ہوسکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مانسہرہ-ناران-جلکھڈ روڈ اور لنکس روڈ کو برف سے صاف کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ “وادی کاغان کے بالائی علاقوں میں کوئی سیاح نہیں ہے اور جو لوگ شوگران میں گھس آئے تھے، انہیں پولیس نے بچا لیا۔” ہزارہ کے بالائی علاقوں میں ایک ہفتے کی شدید بارش اور برف باری کے بعد موسم سہانا رہا۔

ہزارہ ڈویژن شدید سردی کی لپیٹ میں ہے اور کاغان، سیران اور کونش کی وادیوں میں سیاحوں کے داخلے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں