60 سال قبل آج کے دن پی آئی اے کے پائلٹس نے پرواز کا نیا ریکارڈ قائم کیا تھا۔

60 سال قبل آج کے دن پی آئی اے کے پائلٹس نے پرواز کا نیا ریکارڈ قائم کیا تھا۔

کراچی – 2 جنوری 1962 کو پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز (PIA) کا ایک بوئنگ 720-B کراچی میں اترا، جس نے لندن اور کراچی کے درمیان پرواز کا ایک نیا ریکارڈ بنایا۔

پی آئی اے کے طیارے نے نان سٹاپ پرواز کی۔ یہ سیٹل کی بوئنگ فیکٹری سے کراچی کے لیے ہوم ڈیلیوری کی پرواز پر تھی. اور اس نے سیئٹل اور لندن کے درمیان پرواز کے نشان کو پہلے ہی مات دے دی تھی۔

پی آئی اے کے چیف پائلٹ کیپٹن عبداللہ بیگ جو کہ فلائٹ کی کمان کررہے تھے. پی آئی اے کے منیجنگ ڈائریکٹر ایئر کموڈور نور خان کے ساتھ. جہاز سے اترے تو ان کا پرتپاک استقبال کیا گیا۔

کیپٹن بیگ نے میڈیا کو بتایا. کہ طیارے میں سوار عملے کے تمام ارکان کی مربوط کوششوں کے نتیجے میں یہ ریکارڈ ٹوٹ گیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ “بہترین ٹیم” تھی جو میرے ذریعے کسی بھی راستے پر چلائی گئی۔

0

6 ملین ڈالر کے ٹربوفین جیٹ طیارے نے اوسطاً 583.3 سٹیٹ میل فی گھنٹہ کی رفتار سے چھ گھنٹے 45 منٹ اور 33 سیکنڈز میں فاصلہ طے کر کے لندن-کراچی پوائنٹ ٹو پوائنٹ آفیشل ریکارڈ توڑ دیا۔

طیارے میں دیگر افراد کے علاوہ پاکستانی اور غیر ملکی صحافی بھی سوار تھے۔ ہوائی جہاز پر سوار رائل ایرو کلب کے مبصر نے لڑائی کو “خوشگوار اچھا کاروبار” قرار دیا۔ ہوائی جہاز نے 1953 کے دو گھنٹے، نو منٹ کے فاصلے پر آٹھ گھنٹے، 52 منٹ اور 28.5 سیکنڈ کے فاصلے کو ایک برطانوی کینبرا بمبار نے ترتیب دیا تھا۔

پی آئی اے کے طیارے نے 36 گھنٹے سے زائد برفباری اور خراب موسم کے باعث روکے جانے کے بعد لندن سے اپنا سفر شروع کیا۔ رن وے کی خراب حالت کے باوجود لندن سے ٹیک آف ہموار رہا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں