شبلی فراز کہتے ہیں کہ ایل جی انتخابات ای وی ایم کے ساتھ نہیں ہو سکتے

شبلی فراز کہتے ہیں کہ ایل جی انتخابات ای وی ایم کے ساتھ نہیں ہو سکتے

اسلام آباد: وفاقی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی شبلی فراز نے کہا ہے۔ کہ الیکٹرانک ووٹنگ مشینیں (ای وی ایم) پاکستان میں بلدیاتی انتخابات کے لیے نہیں بنائی گئی ہیں۔

دی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے شبلی فراز نے کہا کہ ناظمین کے علاوہ بلدیاتی انتخابات ای۔ وی۔ ایم۔ سے نہیں ہو سکتے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ ای۔ وی۔ ایم۔ کا استعمال صرف تحصیلوں اور اضلاع کے ناظمین کے براہ راست انتخابات کے لیے کیا جا سکتا ہے۔ جس کے لیے امیدواروں کا صرف ایک پینل ہے۔

فراز نے کہا کہ ہمارے بلدیاتی انتخابات میں مختلف قسم کی نشستوں کے لیے متعدد پینل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ای وی ایم ایسے انتخابات سے نمٹنے کے لیے نہیں بنائے گئے ہیں۔

وزیر شبلی فراز نے کہا کہ وہ خود وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار سے بات کریں گے۔ جنہوں نے حال ہی میں ای۔ وی۔ ایم۔ ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے صوبوں میں بلدیاتی انتخابات کرانے کا فیصلہ کیا ہے۔

پنجاب حکومت نے بلدیاتی انتخابات میں ای وی ایم کے استعمال کے قانون میں ترمیم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
چند روز قبل پنجاب حکومت نے دعویٰ کیا تھا۔ کہ وہ جلد ہی ای۔ وی۔ ایم۔ کے استعمال کو قانون میں شامل کرنے کے لیے لوکل باڈیز ایکٹ میں ترمیم کے لیے ضروری قانون سازی کرے گی۔

1

حال ہی میں بتایا گیا تھا۔ کہ وزیراعلیٰ پنجاب بزدار نے لوکل باڈیز ایکٹ میں ترامیم کی منظوری دے دی ہے۔ جس کے تحت پنجاب میں بلدیاتی انتخابات ای وی ایم کے ذریعے کرائے جائیں گے۔ وزیراعلیٰ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا۔ کہ پارلیمنٹ نے پہلے ہی۔ ای۔ وی۔ ایم۔ کے ذریعے انتخابات کو قانونی حیثیت دینے کے لیے ایک قانون بنایا ہے۔ اور صوبائی حکومت بھی ای وی ایم پر انتخابات کرانے کے لیے ضروری قانون سازی کرے گی۔

دوسری طرف، الیکشن کمیشن نے مطالبہ کیا۔ کہ وہ پنجاب حکومت کے نئے مسودہ لوکل گورنمنٹ ترمیمی ایکٹ کو دیکھنا چاہتا ہے۔ تاکہ آنے والے بلدیاتی انتخابات کو ای وی ایم کے تحت کروایا جا سکے۔ ای۔ سی۔ پی۔ نے پنجاب حکومت سے کہا ہے۔ کہ وہ بلدیاتی قانون کا مسودہ دسمبر کے پہلے ہفتے تک جمع کرائے۔ تاکہ کمیشن کو حلقہ بندیوں کی نئی حد بندیوں میں سہولت فراہم کی جا سکے۔

اس سے قبل پنجاب کے الیکشن کمشنر غلام اسرار خان نے کہا تھا کہ اگر صوبائی حکومت نے نئے قوانین کے تحت بلدیاتی انتخابات کرانے کے لیے ضروری دستاویزات فراہم نہیں کیں تو پرانے قوانین کے تحت انتخابات 31 دسمبر کے بعد 120 دن کے اندر کرائے جائیں گے۔ موجودہ بلدیاتی اداروں کی مدت ختم ہو جائے گی۔

2

پنجاب حکومت کے اس فیصلے کو بڑے پیمانے پر دیکھا جا رہا ہے کہ اس معاملے پر الیکشن کمیشن آف پاکستان کے غور و خوض کے نتائج کا انتظار کیے بغیر ہی عجلت میں لیا گیا۔

دی نیوز نے حال ہی میں الیکشن کمیشن آف پاکستان کی طرف سے تین اعلیٰ سطحی کمیٹیوں کی تشکیل کے بارے میں اطلاع دی ہے تاکہ اگلے عام انتخابات میں ای وی ایم سسٹم کے استعمال کی عملییت کا جائزہ لیا جا سکے۔

ای سی پی کے ذرائع نے دی نیوز کو بتایا تھا کہ اگرچہ کمیشن کوشش کر رہا ہے کہ اتنی جلدی میں الیکٹرانک ووٹنگ سسٹم کو تبدیل کرنا ممکن نہ ہو۔ ای سی پی کے ایک سینئر ذریعہ نے کہا، “دوسرے ممالک کو شروع ہونے میں بھی کئی سال لگے لیکن ہم سے توقع ہے کہ یہ ایک دو سالوں میں شروع سے ہی ہو جائے گا۔”

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں